RSS Feed

Category Archives: General

The 19th Martyrdom Anniversary of Ustad Abdul Ali Mazari held in London with great reverence and renewed commitment.

London witnessed a huge gathering of the Hazara Diaspora on Sunday, March 16, 2014 to commemorate the 19th Martyrdom Anniversary of Ustad Abdul Ali Mazari, his companions and the martyrs of Afshar Blooshed with unprecedented support  from people of all walks of life. People from across UK gathered in overwhelmingly large numbers at the Bukhara Hotel, Isleworth to renew their unconditional commitment and pay homage in a resolute manner to the martyrs of February 11, 1992 and the martyrs of March 13th, 1995 who became the victims of aggression and terrorism in Afghanistan.

Hundreds of men, women and children came along to exhibit solemn promise to their Great Leader and the fallen heroes.

Right Wing Picture (Audience)Right Wing Picture (Audience)

The responsibilities of the Stage Secretary were shouldered by Khan Ali and Maryam Atayee whose excellent skills of poetry-reading illuminated the programme with huge rounds of appreciation from the audience. The poems were carefully chosen to depict the scenario, replete with revolutionary quotes and sayings, attributed to Ustad Abdul Ali Mazari to pay respect in the noblest way.

Khan Ali (Male Stage Secretary)

Khan Ali (Male Stage Secretary)

The rounds of delivering verses of selected poems continued throughout the programme which provided equal opportunities to the stage secretaries to show their poetic skills in melodious tone.

Maryam Atayee (Lady Stage Secretary)

Maryam Atayee (Lady Stage Secretary)

The programme started with the recitation of the Holy Quran whereas Ali Ahmadi was blessed with an opportunity to enlighten the hearts of the audience.

Ali Ahmadi (Reciting verses from the Holy Quran)

Ali Ahmadi (Reciting verses from the Holy Quran)

Following him, Shala Khaliqyar, a young girl, was called upon to pay tribute to the Great Leader. She saluted Ustad Mazari by mentioning short biography of the Leader and proceeded on saying that Ustad Mazari was always alive in hearts of the people. She talked about the bravery of the Leader who also taught people the message of love, equality and justice. She said she took great pride in mentioning the daughter of Ustad Mazari who always admonishes ladies to wear hijab.

Habib Ahmad Nadi was the next speaker who revered Ustad Mazari by reading a Persian elegy:

هندو كش گريه كن مزاري رفت
ان زلال هميشه جاري رفت

(Hindukush weep for Mazari is gone
That which flowed continually is gone)

Habib Ahmad Nadi and his friend.

Habib Ahmad Nadi and his friend.

Latifa Sultani was the next speaker to be invited on the stage to deliver a speech. She termed Ustad Mazari as the only support and hope of the people who took extraordinary measures to unify the Hazara tribes and save them from internal conflicts and disintegration.

Latifa Sultani

Latifa Sultani

Later, a group of young kids, known as the New Generation Group and consisting of two boys and two girls were called on the podium to share their affection to their beloved Leader. They showed their love through a Persian poem which reads:

اي خدا دل بيقرارى موكونه
از غم افسرده يه زاري موكونه

(Oh Lord, my the heart is restless
it is sad, depressed and moans)

The New Generation Group

The New Generation Group

Then, Liaquat Ali Hazara, was invited on the stage to salute Ustad Mazari. He came on the dice and said that he will specifically talk as per topic’s demand which was, (مزاری سمبول وحدت ملی و تندیس صداقت – Mazari the symbol of national unity and integrity). He portrayed Ustad Mazari as a perfect human through examples and historical references. He quoted Dr. Ali Shariati’s saying about the Holy Quran whose whole philosophy revolves around the concept of Mankind and Human Being. He said that a large number of people come in this world and pass away but they remain mankind their whole life while there are a few people who make to the category of humans and that is because of their noble work and past services to the humanity. He, further, related the concept of mankind and human being with the quotes of Tiber Munde (a Hungarian-French Scholar) who had termed the world to be in a conic shape in his book, “a glance on the history of tomorrow“. Mr. Munde, after declaring the world to be in a conic shape, divided it into three parts, ie., the bottom, the middle and the top. The speaker (LAH) explained that in the bottom part of the cone, a huge number of people are placed who do not make efforts to change their lives and always remain at the bottom. They are also called the mankind. In comparison, some people can progress to the middle part of the cone who are in transition from mankind to human being while a few can make it to the top and they are the human beings. Ustad Mazari was one of the few people who arose from the bottom to the top due to his outstanding performances, exemplary vision and foresightedness.
LAH also said that Ustad Mazari’s messages of communal harmony, equilibrium, justice, tolerance and protection of the rights of women and minorities; have in fact been mentioned in the Magna Carta of the Britain (the first undisputed charter of the then King of England, promulgated in 1215, to guarantee equal rights and opportunities to all and safeguarding the rights of minorities). He also explained as to show the essential elements of Magna Carta have been incorporated into the British Constitution, European Union Constitution, the European Convention of Human Rights and the Universal Charter of Human Rights. He also explained the reason to mentioning Magna Carta and linking it to the messages of Ustad Mazari. As Mazari had emphasized on  the fundamental human values at a time when the world had forgotten about Afghanistan, when Afghanistan had plunged into civil war and when over half of the world was oblivious of the technological advancement including the internet. He said Mazari preached these ideals at the right time and only the most refined people can envision such excellent thoughts and Mazari was one of the finest persons the world ever produced.

Liaquat Ali Hazara

Liaquat Ali Hazara

Neelab Follad was the next speaker to deliver a poem in honour of Ustad Mazari. Her excellent method of delivering poetry, with primary and secondary stresses where necessary, coupled with melodious voice convinced the audience to appreciate her efforts with huge rounds of applause. Some verses are as under:

اى سروسبزعشق زبعدت بهار كو
دردشت تشنه دل ما چشمه ساركو

بارفتنت جنازه خورشيد خوانده شد
ابر سياه ظلمت وجزشام تاركو

كوان دلي ديگر كه طپيد ازبراي ما
ان مظهر وفاو دل بيقراركو

بازار دين فروشي عجب گرم گشته است
ياصاحب الزمان تو وان ذوالفقار كو

(Ah, the Cedar of love, where is the spring after you!
Where is the spring in the wasteland of our parched hearts!)

(With you passing away, the funeral of the Sun was said
Where is the cloudy black deed and the dark night!)

(Where is the heart that ached for us!
Where is the epitome of loyalty and the restless heart!)

(The trade of faith-selling is thriving
Ye Sahib-uz-Zaman and where is the Zulfiqar!)

Neelab Follad

Neelab Follad

Later, Ustad Mazari’s only biological heir and his daughter, Zainab Mazari, addressed the audience through a pre-recorded  video tape. She urged the people to maintain cohesion and harmony among themselves in that her father had always preached for the same values. She said that the Hazaras are in favour of equilibrium in Afghanistan and that women should have equal opportunities in the society.

Maryam Mazari

Zainab Mazari

Following her, Haji Sadiqzada, the Representative of Ayatullah Mohaqiq Kabuli for Australia, Europe and America came on the dice to deliver a speech. As he had returned from Afghanistan just a week ago, so he emphasized on the need to share his experience of the recent trip in line with the preaching of Baba Mazari.

Starting in a fluent tone, he lambasted Mohaqiq and Khalili for polygamy and amassing ill-gotten wealth which was never the intention of Baba Mazari. He questioned, as to how these so-called Hazara leaders; who accidentally held the reign, declare themselves as the spiritual leader and successor of Baba Mazari when they cannot follow the footsteps of their predecessor. He said that both Mohaqiq and Khalili did not deserve to represent Hazaras due to their incompetence and apathy towards genuine issues of the people.

His speech was packed with Quranic verses about equality, justice, forbearance and perseverance to be applied in a just and civilized society. He even quoted verses from the Quran in which Allah says to the Prophet (peace be upon him and his progeny) to support his nation. He also claimed that supporting one’s own nation is in line with Islamic teaching which is not prohibited.

Haji Sadiqzada

Haji Sadiqzada

Zakir Hussain and his friends were the next participants who came from Birmingham to render respect to Baba Mazari. He read a Persian poem attributed to Baba Mazari while his group repeated the first line of the poem in chorus :

بابه جو بيتو توديگه غم دل كم نموشه
اي تيمو بابه موگه دل مو بيغم نموشه

(Aye Father, heart-grieving does not subside without you
Thy orphans lament for the sorrows won’t fade away)

Zakir Hussain and Friends from Birmingham

Zakir Hussain and Friends from Birmingham

Haji Gulzari was the next speaker who sensitized the audience about the mass migration of Hazaras in 1890s to the neighbouring Pakistan, Iran and India due to the extreme forms of subjugation. Through slides’ show, he shed lights on the history of the Hazaras, their re-emergence and achievements to the highest levels of excellence in public and private sectors in those countries, noticeably in the British and Pakistan Army. The slides’ show covered the period from 1205 to the present.

Haji Gulzari

Haji Gulzari

Rahmat Follad was the penultimate speaker who shared his emotions and devotion through poetry, written for the purpose. It reads:

سروازاد شهادت السلام السلام
اي ثارملت السلام

السلام اي شيرميدان نبرد 
عارف فرزانه خو فرزانه مرد

ناله مارا سرودي اى پدر
هرچه بود اخر توبودي اى پدر

نام توسردفترحماسه هاست
ياد تو گنجينه مهرو وفاست

(Salute to the evergreen liberated Soul
Salute to the Asset of the Nation)

(Salute to the Brave Heart of the battlefield
Gnostically prudent and the wise)

(Aye Father, thou chanted our moaning
Whatever, thou were the hope, aye Father!)

(Thy name is in exordium of epic
Thy remembrance is a treasure of love and loyalty)


Rahmat Follad

Rahmat Follad

The last speaker of the programme was Ali Ahmadi whose speech consisted of the quotes, sayings and preaching of Ustad Mazari.

Ali Ahmad

Ali Ahmadi

Later, Haji Sadiqzada was requested to come on the dice to offer prayers for solidarity and unity of the people.

Photography (Sama Studio)

Advertisements

Exclusive Interview of Shah Ali Akbar Shahrestani

For those readers and visitors who are interested to know about the History of Afghanistan vis-a-vis the History of Hazaras, they can read the interview in Urdu, published on a Pakistan-based Urdu Newspaper, the Daily Awaz-e-Nasle Nau.

First Part

First Part

Second Part

Second Part

Third Part

Third Part

Fourth Part

Fourth Part

Fifth Part

Fifth Part

The Last Part

The Last Part

 

 

 

 

2012 in review

The WordPress.com stats helper monkeys prepared a 2012 annual report for this blog.

Here’s an excerpt:

600 people reached the top of Mt. Everest in 2012. This blog got about 5,000 views in 2012. If every person who reached the top of Mt. Everest viewed this blog, it would have taken 8 years to get that many views.

Click here to see the complete report.

کویٹہ: خانہ جنگی کے دہانے پر

Urdu article, published on the Daily Awaz Nasl-e-Nau on 22/07/2012.

(Source)

نجم الدّین اے شیخ کے تازہ کالم”پاکستان افغانستان میں کیا چاہتا ہے” کا تنقیدی جایزہ۔

 

جب ھم پاکستان کی تاریخ پر نگاہ ڈالتے ہیں تو ھمیں ایک ایسی مخصوص استبدادی انداز فکرکا پتہ چلتا ہے جسکی ھمیشہ یہی کوشش رہی ہے کہ حکومتی بھاگ دوڈ کو عوام کی پہنچ سے ھر ممکن دور رکھیں۔ وقت کے ساتھ ساتھ اس مخصوص گروہ کی عیاری مزید قوتّ پکڑتی گیی اور اسطرح عوام اورمعاشرے کے بڑے اسٹیک ھولڈرز کواپنے مفادات کے لیّے نہ صرف استعمال کیا گیا بلکہ انکو امور مملکت سے بھی دور رکھا گیا۔ مثّلا، آزادی کے صرف چند سال بعد ھی باباے قوم محمد علی جناح (رح) ھم سے جدا ھو جاتے ھیں جو بظاھر انکی خرابی صحت کی وجہ سے تھی مگراسکے برعکس بااعتماد ذرایع کا مانا ہیں کہ باباے قوم کو جان بوجھ کر زیارت جیسی ٹھنڈی جگہ پر بھیجا گیا تاکہ اسکی صحت تیزی سے خراب ھو جو بلآخر انکی طبعیی موت پر منتتج ھوی۔  اسکے علاوہ، پاکستان کے پہلے وزیراعظم اور تحریک آزادی کے سرکردہ بانیوں میں سے ایک، لیاقت علی خان کا قتل آج تک ایک معمہّ ہی رہا جو اب ھمیشہ کےلیے سرد خانہ کی نظر ھو گیی ہے۔

بدقسمتی سے اس ملک کے خلاف ھمیشہ سے سازشیں بنتی گیی اور انکو عملی جامہ بھی پہنایا گیا مگر آج تک کسی نے انکو جاننے کی اور اصل مجرموں کو بے نقاب کرنے کی جسارت نہیں کی۔ 1971 کے سقوط ڈھاکہ، بھٹوّ خاندان کا قتل، تہرا نظام تعلیم یعنی اردو، انگلش اور مدرسہ سسٹم، نواب اکبر بگٹی کا پراسرار قتل اور ھزارہ قوم کی قتل عام کچھ ایسے بڑے مسلے ھیں کہ جنکی کبھی مکمل تحقیقات نہیں ھوی تاکہ اصل مجرموں تک پہنچا جا سکیں۔

ایک ایسا مخصوص طبقہ جنکی وفاداریاں انتہاپسندوں کے ساتھ ھیں، ھمیشہ سے فیصلہ سازی اور شراکت اقتدار میں مرکزی کردار رکھتے ھیں جو اصل ملکی پالیسی سے روگردانی کرتے ھیں۔ ان میں سے بہت سے خفیہ ایجنسیوں کے پے رول پر ھوتے ھیں جو خارجی طاقتوں کے کام سرانجام دیتے نظر آتے ھیں اور اس فہرست کی تیاری میں بہت احتیاط سے کام لیا گیا ہے تاکہ ایسے لوگوں کو شامل کیا جا سکیں جونسل اور عقیدہ کی بنیاد پر نفرت پھیلاتے ھیں۔ ان خودغرض اور نفرت انگیزعناصر نے پورے پاکستانی معاشرے کو یرغمال بنارکھا ھیں جو اپنے بیرونی آقاوں کی ایما پر کام کرتے نظر آتے ھیں۔

اس مضمون کے عنوان کے تسلّسل میں، مجھے بھی ایک ایسا کالم پڑھنے کا اتفاق ھوا جو پاکستان کے سابق سفیر اور فارن سیکرٹری، نجم الدّین اے شیخ نے لکھا ہے جسمیں اسنے تاریخی حقایق کو توڈ مروڈ کر پیش کرنے کی کوشش کی ہے۔ اسکا حالیہ مضمون “پاکستان افغانستان میں کیا چاہتا ہے؟”  27 دسمبر 2011 کو پاکستان کے ایک روزنامہ، دی ٹریبون میں شایع ھوا تھا جسمیں موصوف نے افغانستان کے معاشرتی ساخت اور لسانی چپقلشیوں سے متعلقّ حالات کا جانبداری سے ذکر کیا ہے۔

مجھے یہ سوچ کر کافی حیرانی ھوتی ہے کہ کیوںکر کوي شخص غیر مصدّقہ اور نفرت انگیز چیز اپنی تحریر میں لاتا ہے جو صرف اور صرف اسی کو نقصان پہنچاتی ھے۔ اسکے علاوہ، انہوں ںے اپنی دانشورانہ اور مدبرانہ حیثّت کوپامال کرتے ھوۓ، دانستہ طور پر اپنے قاریین کو دھوکہ دینے کی کوشش کی ہے۔ تاھم ملک کے اشرافیہ طبقہ کی ایک بڑی تعداد خفیہ ایجنسیوں کے باقاعدہ تنخواہ دار ھوتے ھیں یا انکے ساتھ نزدیکی رابطوں کے باعث روز مرّہ کے امورباھمی اشتراک سے انجام دیتے نظر آتے ھیں جنکی جھلک مختلف رسایل، روزناموں، جریدوں اور بین القوامی اخباروں میں شایع ھوے انکے مضامین ھوتے ھیں جنکی وجہ سے بہت سے قاریین ان کالم نگاروں، لکھاریوں اور مصّنفین کی بلند پایہ سیاسی، سماجی اور اخلاقی قدوقامت سے دھوکہ کھا جاتے ھیں۔

اس ضمن میں موصوف نجم الدّین اے شیخ نے افغان معاشرے سے متعلقّ تاریخی حقایق کو غلط پیش کرنے میں کوي کسر نہیں چھوڈی۔ مثال کے طور پر، اپنے مضمون کے دوسرے پیراۓ میں لکھتے ھیں کہ ” 1992 میں ھم نے کوشش کی کہ مجاھدین کے تمام دھڑوں کو  انتخابات سے پہلے شراکت اقتدارکے فارمولے پر متفقّ کر سکیں جو بارآور نہ ھو سکی اسکی ایک وجہ مجاھدین کے ذاتی مفادات تھےاس لیے  مکمل نسلی توازن نہیں بنایا جا سکا اور دوسری وجہ ایرانیوں کا یہ اصرار تھا کہ ٪30 نشستیں اہل تشّیع کو ملنی چاہیے جبکہ افغانستان میں ھزارہ قوم کی بڑی تعداد شیعہ ھیں، جو افغانستان کی کل آبادی کا ٪8 ہے۔ اسکے علاوہ، ھمارا حمایت یافتہ حکمتیار نے بھی رباّنی کی تاجک جماعت اسلامی میں کوي بھی مرکزی کردار عارضی طور پر بھی قبول کرنے سے انکار کیا”۔

یہاں یہ بتانا دلچسپ امر ہے کہ موصوف 1992- 1994 تک ایران میں پاکستان کے سفیر کے طور پر اپنے فرايض سرانجام دے چکے ھیں اور اوپر بتاے گیے پیراگراف میں لفظ “ھم” کا ذکرمبہم انداز میں کیا گیا ہے جو مزید وضاحت کا متقاضی ہے تاکہ اسکا اصل مفہوم  معلوم ھو سکے۔ مزید، انہوں نے کہا ہے کہ مجاھدین کے اپنے مفادات اور ایرانیوں کے ضد کی وجہ سے کوي بھی حتمی فیصلہ نہیں ھو سکا جسمیں انہوں نے ایران سے منسوب یہ بات کہی ہے کہ شراکت اقتدار سے متعلّق فارمولے کی رو سے ٪30 نشتیں شیعہ آبادی جنمیں ھزارہ قوم کی کی مغلوب تعداد ھیں کو ملنی چاہییں۔

موصوف نے بڑے ماہرانہ انداز میں اپنے قاریین کو افغانستان میں آباد ھزارہ قوم سے متعلقّ غلط تاثرّ دینے کی کوشش کی ہے لیکن ھزارہ قوم کی تاریخ کا مطالعہ کرنے سے پتہ چلتا ہے کہ ایرانی اہلکاروں نے کبھی بھی ان کی مالی یا کسی اور طریقے سے مدد نہیں کی ہیں حتی کہ شدید خطرات میں بھی جب طالبان مزارشریف، یکاولنگ اور بامیان میں انکی (ھزارہ قوم) کی نسل کشی کر رہا تھا، تب بھی ایران کوي بھی کردار ادا کرنے سے قاصر رہا تو یہ کیسے ممکن ہے کہ کبھی ایران ان کے لیۓ کوي دلیری سے بات کریں؟ بہت قوی ثبوت موجود ھیں جن سے معلوم ھوتا ہیں کہ ایران نے ھمیشہ ان قوتوں کی مدد کی ھیں جو ھزارہ قوم کے خلاف لڑتی آي ھیں انمیں تاجک پیش پیش ھیں۔ اسی طرح، ھزارہ قوم کے خلاف برسرپیکار دھڑے جیسے شیخ آصف محسنی جو نسلاّ پشتون شیعہ ملاّ اور ایران نواز ہے اور محمد اکبری جو ھمیشہ ھزارہ قوم کی نمایندہ سیاسی تنظیم، حزب وحدت اسلامی افغانستان جسکا قاید عبدل علی مزاری تھا، کے خلاف ایرانی نواز ایجنٹوں نے ھر ممکن طاقت استعمال کیں۔ انکے علاوہ، ایران نے اس زمانہ میں آٹھ ایران نواز سیاسی تحریکوں کومالی، سیاسی اور اخلاقی مدد کیں جو حزب وحدت اسلامی افغانستان کے حریف تھیں اور جنکا بنیادی کام حزب وحدت اسلامی کے خلاف جنگ کر کے اسکو کمزور کرنا تھا۔

یہاں اس امر کی وضاحت لازمی ہے کہ کویٹہ اور کراچی میں ھزارہ قوم کی تعداد بلترتیب 7 لاکھ اور 3 لاکھ ھیں آبادی کا یہ تناسب ان سب کے علاوہ ہے جو ھزارہ قوم دوسری جگہوں میں آباد ھیں۔ پاکستان میں آباد ھزارہ قوم کی شرح خواندگی اس کی آبادی کے لحاظ سے سب سے زیادہ ھے جنکے ٪ 90 لوگ پڑھے لکھے   ھیں۔  موصوف نے پاکستانی ھزارہ کی اس ملک کے لیے دی گیی بڑی قربانیوں کو مکمل نظرانداز کیا ہے جنہوں نے ھمیشہ اس کی حفاظت کے لیے اپنی جانوں کا نظرانہ پیش کیا۔ مثلاّ، جنرل محمد موسی خان (پاک آرمی کے سابقہ کمانڈرانچیف اور 1965 اور 1971 کے جنگوں کے ھیرو)، اییر مارشل (ریٹایرڈ) شربت علی چنگیزی، پاکستانی خاتون پایلٹ سایرہ بتول اور اولمپکس میں تین مرتبہ پاکستان کی نمایندگی کرنے والے باکسر ابرار حسین ھزارہ  اس قوم کے کچھ ایسے سپوت ھیں جن کی خدمات وفاق پاکستان کے لیے کسی سے ڈھکی چھپی نہیں۔ ان کے علاوہ، ھزارہ قوم کے اور بھی ھونہار اور باصلاحیتّ نوجوان ھیں جو اپنی محنت اور لگن سے پاکستان کی تعمیر و ترقی میں اھم کردار ادا کر رہے ھیں مگر کالم نگار نے ان سب خدمات کو ایک طرف رکھتے ھوے اپنے آقاوں کی آشیرباد حاصل کرنے کی کوشش کی ہے۔

اس کوشش میں، موصوف کے نسلی تعصبّ نے اسکے مدبرّانہ حصےّ کو مکمل طور پر اپنی گرفت میں لیۓ رکھا ہے تاکہ ھزارہ قوم کی آبادی کو صرف ٪8 تک ظاھر کرنے میں سعی کرے۔ مجھے مکمل یقین ہے کہ شیخ صاحب نے اپنے بال دھوپ میں سفید نہیں کیے ھونگے کہ اس قدر سچاي سے روگردانی کرے۔ میں یہ بھی مناسب سمجھتا ھوں کہ اس کی توجہّ بون معاھدہ کی طرف مبذول کراوں جسمیں ھزارہ قوم کی آبادی کو ٪19-20 بتاي گیی ہے درکنار اس کے کہ ھزارہ قوم کا اصرار ہیں کہ اس کی آبادی ٪25-30 تک ہے۔ اس جنگ زدہ اور مفلوک الحال ملک میں ثور انقلاب سے ابتک کوی مردم شماری نہیں کی گیی لحاظہ افغانستان میں آباد مختلف قومیتوں کا صحیح تناسب جاننے کےلیے کوي عالمگیرپیمانہ نہیں ہے کہ اصل تعداد کا علم ھو سکے۔ لہذا یہ باور کرنا کافی مشکل ہے کہ موصوف کالم نگار اور سابق سفیر کو افغانستان میں آباد مختلف قومیتوں کے بارے میں معلوم نہ ھوں۔

ھماری سالوں کی مسلسل غلط پالیسوں نے افغانستان کو نسلی رقابتوں، استحصال اور ظلم و زیاتیوں کی آماجگاہ بنا دیا ہے جن سے افغانیوں کی ھمدردیاں ھم سے دور ھوتی گیی اور آج وہ مسلم اّمہ، بھاي چارے کی فضا اور اسلامی عالمگیریت جیسے فلسفہ سے نفرت کرتے نظر آتے ھیں۔ پاکستانی اسٹیبلشمنٹ کے مخصوص طرز فکر نے ان میں اس حد تک لسانی منافرت، نسلی تعصبّ اور گروھی عدم تناسب  کو ھوا دی ہے کہ جس سے ایک عام پاکستانی کی عزتّ نفس اور جذبہ حب الوطنی کو بڑا نقصان پہنچا ہے۔

یہ ھمارے لیۓ انتہای ضروری ہے کہ دانشورحضرات ، لکھاری، درس وتدریس سے وابستہ افراد اور سیاستدان سب اپنی ترجیحات کوپاکستان کے قومی مفادات سے منسلک کریں تاکہ اس ملک کی اسٹریٹجک اھمیت کو ازسرنوجلا بخش سکیں۔ 

!!!!اطلاع عام

!محترم قاریین 

اس بلاگ کےقاریین نے اپنے برقی پیغامات میں گذارش کی ہیں کہ آیندہ کے بلاگز میں شامل آرٹیکلز اور تجزییوں کو اردو میں پیش کروں تاکہ انکو پڑھنے اورسمجھنے میں آسانی ھوگی۔ ھر چند کہ یہ ایک محنت اور وقت طلب کام ہے کیونکہ ایک مضمون کو انگریزی میں لکھکر اسکا اردو ترجمہ کرنا دشوار ہے لیکن قاریین کو سہولت اور دلجوي کے لیےاس سے عہدہ برا ھونے کو پوری کوشش کروںگا۔ مزیدبرآں ھمارے ایسے قاریین جو باقاعدگی سے اخبارات و رسایل پڑھنے کا شغف رکھتے ھیں وہ میرے مضامین کویٹہ سے شایع ھونے والے اردو اخبار  آواز      نسل نو کی ویب سایٹ پر بھی ملاحظہ کر سکتےھیں۔ 

(tnnhazara.org) 

 اس سلسلے کی پہلی کوشش کو آپ اگلے صحفے پر ملاحظہ فرماییںگے جن میں حال ھی میں لکھے گیے کالم کا اردو ترجمہ پیش کیا جا رہا ہے۔

2011 in review

The WordPress.com stats helper monkeys prepared a 2011 annual report for this blog.

Here’s an excerpt:

A San Francisco cable car holds 60 people. This blog was viewed about 2,400 times in 2011. If it were a cable car, it would take about 40 trips to carry that many people.

Click here to see the complete report.

%d bloggers like this: